ریسکیو ہیڈکوارٹرز میں 1192لاسٹ ہیلپ لائن کاٹیسٹ رن کا آغاز کر دیا گیا

  لاہور(سہیل شاہ)پنجاب ایمرجنسی سروس نے ریسکیولاسٹ ہیلپ لائن- 1192کا آغاز کر دیا جس کے تحت فائر ، ایکسیڈنٹ ، عمارتیں گرنے اور بم دھماکوں کے لاوارث مریضوں کو ان کے گھرانوں کے ساتھ ملایا جائے گا۔ پنجاب ایمرجنسی سروس روزانہ کی بنیاد پر 3000ایمرجنسیز پر پنجاب بھر میں لوگوں کو ریسکیو سروس فراہم کر رہی ہے جس میں بعض اوقات ایسے حادثے کے شکار لوگوں کو ریسکیو سروس فراہم کی جاتی ہے جن کے پاس کوئی پہچان کی دستاویز موجود نہیں ہوتیںجن میں بے ہوش اور مردہ لوگ خاص طور پر شامل ہیں۔ اس لیے یہ وقت کی اہم ضرورت تھی کہ کوئی ایسا نظام بنایا جاتا کہ ان بے سہارا لوگوں کو ان کے خاندانوں کے ساتھ ملایا جاتااسی مقصد کے لیے ریسکیو لاسٹ ہیلپ لائن کے ٹیسٹ رن کاآغاز کیا گیا ہے تاکہ کوئی بھی فردمتعلقہ ہیلپ لائن پر رابطہ کرکے معلومات حاصل کر سکے ۔ ان خیالات کا اظہار بانی ڈائریکٹر جنرل پنجاب ایمرجنسی سروس ڈاکٹر رضوان نصیر نے گذشتہ روز 1192ریسکیو لاسٹ ہیلپ لائن کے ٹیسٹ رن کے موقع پر کیا۔ اس موقع ریسکیو ہیڈ کوارٹرزاور ایمرجنسی سروسز اکیڈمی کے سنئیر آفیسرز کے ساتھ ساتھ میڈیا نمائندگان بھی موجود تھے۔
ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر رضوان نصیر نے میڈیا نمائندگان کو بریف کرتے ہوئے کہا کہ ڈزاسٹر اور میجر ایمرجنسی میں صورتحال اور زیادہ پریشان کن ہو جاتی ہے جب لوگ حادثے کے نتیجے سے خوف اور بد حواسی کا شکار ہوتے ہیں جس سے ایسے کیسز میں اضافہ ہو جاتا ہے اورایسے کسی نظام /سہولت کی عدم موجودگی کی وجہ سے صورتحال اور مشکل ہو جاتی ۔ ڈجی جی ریسکیو نے کہا کہ اس وقت ریسکیو 1122کا ایمرجنسی مینجمنٹ کا ایک جامع نظام پورے پاکستان میں موجود ہے خاص طورپر جن میں خیبر پختوانخواہ ، گلگت بلستان اور آزاد کشمیر میںموجود ایمرجنسی سروسز کے پلیٹ فارم کواستعمال کرتے ہوئے صوبوں کے درمیان تجارتی اور سیاحتی مقاصد کے لیے سفر کرنے والے حادثے کے شکار لوگوں کو اس ریسکیو لاسٹ ہیلپ لائن کے ذریعے فیملیز کے ساتھ ملواناممکن ہو سکے گا جو کہ وقت کی اہم ضرورت تھی۔
پنجاب ایمرجنسی سروس نے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کی مدد سے ابتدائی طور پرتین لائنوں پر مشتمل 1192ریسکیو لاسٹ ہیلپ لائن کا آغاز کردیا ہے جن پر 24گھنٹے پاکستان بھر سے تمام نیٹ ورک سے کال کی جا سکتی ہے۔جس سے کوئی شخص بھی معلومات حاصل کر سکتا ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ ریسکیو لاسٹ ہیلپ لائن 1192پنجاب کے ساتھ ساتھ پاکستان بھر سے گمشدہ اور ایسے لوگ جن کی فوری پہچان ممکن نہ ہو سکے ان کو وسیع ڈیٹا بیس کے تحت انکی فیملیزکے لیے آسانی ھو گی۔

This post has been Liked 0 time(s) & Disliked 0 time(s)